#3151

مصنف : فقیر اللہ

مشاہدات : 3133

عدالت صحابہ ؓ

  • صفحات: 152
  • یونیکوڈ کنورژن کا خرچہ: 3040 (PKR)
(منگل 05 مئی 2015ء) ناشر : ادارہ علوم اثریہ، فیصل آباد

صحابی کا مطلب ہے دوست یاساتھی شرعی اصطلاح میں صحابی  سے مراد رسول  اکرم ﷺکا وہ  ساتھی ہے جو آ پ پر ایمان لایا،آپ ﷺ کی زیارت کی اور ایمان کی حالت  میں دنیا سے رخصت ہوا ۔ صحابی  کالفظ رسول اللہﷺ کے ساتھیوں کے ساتھ کے خاص  ہے  لہذاب  یہ لفظ کوئی دوسراشخص اپنے ساتھیوں کےلیے  استعمال نہیں کرسکتا۔  انبیاء  کرام﷩ کے  بعد  صحابہ کرام   کی   مقدس  جماعت تمام  مخلوق سے  افضل  اور اعلیٰ ہے یہ عظمت اور فضیلت صرف صحابہ کرام  کو ہی  حاصل  ہے  کہ اللہ  نے   انہیں دنیا میں  ہی  مغفرت،جنت اور اپنی رضا کی ضمانت دی ہے  بہت سی  قرآنی آیات اور احادیث اس پر شاہد ہیں۔صحابہ کرام  سے محبت اور  نبی کریم  ﷺ نے  احادیث مبارکہ  میں جوان کی افضلیت  بیان کی ہے ان کو تسلیم   کرنا  ایمان کاحصہ ہے ۔بصورت دیگرایما ن ناقص ہے ۔ اور صحابہ کرام کی  مقدس جماعت  ہی وہ پاکیزہ جماعت  ہے جس کی  تعدیل قرآن نے بیان کی ہے ۔ متعدد آیات میں ان کے  فضائل ومناقب پر زور دیا ہے  اوران کے اوصاف حمیدہ کو ’’اسوہ‘‘ کی حیثیت سے پیش کیا ہے ۔  اوران  کی راہ  سے انحراف کو غیر سبیل المؤمنین کی اتباع سے تعبیر  کیا ہے ۔ الغرض ہر جہت سے صحابہ کرا م  کی عدالت وثقاہت پر اعتماد کرنے  پر زور دیا ہے۔ اور علماء امت نے قرآن  وحدیث کےساتھ  تعامل ِ صحابہؓ کو بھی شرعی حیثیت سے پیش کیا ہے ۔اور محدثین نے ’’الصحابۃ کلہم عدول‘‘  کے قاعدہ کےتحت رواۃ حدیث پر جرح وتعدیل کا آغاز  تابعین سے کیا ہے۔اگر صحابہ پر کسی پہلو سے  تنقید جائز ہوتی توکوئی وجہ نہ تھی  کہ محدثین اس سے صرفِ نظر کرتے یاتغافل کشی سے کام لیتے۔ لہذا تمام صحابہ کرام کی شخصیت ،کردار، سیرت اور عدالت بے غبار ہے اور قیامت تک بے غبار رہی گئی ۔ لیکن مخالفین اسلام نے جب کتاب وسنت کو مشکوک بنانے کے لیے  سازشیں کیں تو انہوں نے سب سے پہلے  صحابہ کرامؓ ہی کو ہدف تنقید بنانا  ضروری سمجھا۔ ان  کے کردار کوبد نما کرنے  کےلیے  ہر قسم کےاتہام تراشنے سے دریغ نہ کیا۔قرآن وسنت کے مقابلہ میں تاریخی وادبی کتابوں سے چھان بین کر کے تصویر کا دوسرا رخ پیش کرنے کی سعئ ناکام کی تو  محدثین اور علمائے امت نے   مستشرقین کے  اعتراضات کے  جوابات اور دفاع صحابہ کے سلسلے میں   گراں قدر خدمات انجام دی ہیں۔ زیر نظر کتاب’’ عدالت  صحابہ ‘‘ ادارہ علوم اثریہ ، فیصل آباد کے متخصص  جناب  فقیر اللہ  صاحب کی کاوش ہے ۔جس میں انہوں نے  عدالت صحابہ  سے متعلق چند مباحث  سپرد قلم کیے  ہیں  جن سے عدالت صحابہ  سے متعلق اکثر شبہات کا ازالہ ہوجاتا ہے۔اللہ تعالیٰ  موصوف  کی اس کا وش  کو قبول فرمائے اور اہل اسلام کے دلوں میں صحابہ کی   عظمت ومحبت پیدا فرمائے (آمین)  (م۔ا)
 

عناوین

 

صفحہ نمبر

حرف آغاز

 

1

سخن ہائے گفتنی

 

2

صحابی کی تعریف

 

4

صغیر الحسن صحابہ ؓ

 

14

معرفت صحابہ ؓ کا طریقہ

 

19

کتب معرفت صحابہ ؓ

 

20

صحابہ کرام ؓ کی تعداد

 

25

صحابہ کرام ؓ میں فرق مراتب

 

27

افضل الصحابہ ؓ

 

30

فقہاء صحابہ کرام ؓ

 

52

عدالت صحابہ کرام ؓ

 

62

صحابہ کرام ؓ سے صدور معصیت

 

89

مشاجرات صحابہ ؓ

 

95

مشاجرات صحابہ ؓ مجدد  صاحب کی نظر میں

 

105

سب صحابہ رضوان اللہ علیہم اجمعین

 

115

سب صحابہ ؓ سے مراد

 

121

صحابہ کرام ؓ پر تنقید بھی سب ہی کے حکم میں ہے

 

122

مآخذ و مراجع

 

139

 

آپ کے براؤزر میں پی ڈی ایف کا کوئی پلگن مجود نہیں. اس کے بجاے آپ یہاں کلک کر کے پی ڈی ایف ڈونلوڈ کر سکتے ہیں.

اس ناشر کی دیگر مطبوعات

ایڈ وانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین 117
  • اس ہفتے کے قارئین 4952
  • اس ماہ کے قارئین 21960
  • کل قارئین55183573

موضوعاتی فہرست