#416

مصنف : پروفیسر ڈاکٹر عبد الراؤف ظفر

مشاہدات : 24238

علوم الحدیث فنی فکری اور تاریخی جائزہ

  • صفحات: 990
  • یونیکوڈ کنورژن کا خرچہ: 29700 (PKR)
(منگل 15 مارچ 2011ء) ناشر : قدوسیہ اسلامک پریس لاہور

پروفیسر ڈاکٹر عبدالرؤف ظفر ان نابغہ روز گار ہستیوں میں سے ایک ہیں جو تشریعی اور عصری دونوں علوم میں مہارت تامہ رکھتے ہیں۔ آپ نے گلاسکو یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کی ڈگری امتیازی حیثیت میں حاصل کی۔ اور بہاولپور یونیوسٹی میں حدیث کے استاد ہونے کے ساتھ ساتھ مسند سیرت کے ڈائریکٹر ہیں۔  ’علوم الحدیث فنی، فکری اور تاریخی مطالعہ‘ اسی مرد مجاہد کے شب و روز کی محنت کا نتیجہ ہے۔ جس کا لفظ لفظ تحقیق و جستجو سے بھرپور ہے۔ ایک شارع کی حیثیت سے رسول اکرم ﷺ کا یہ فرض منصبی تھا کہ آپ ﷺ قرآنی احکامات اور اس کی جملہ جزئیات کی تشریح و توضیح کریں۔ اور  یہ تمام تر تفصیلات صرف اور صرف احادیث میں ملتی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ مسلمان نسل در نسل احادیث نبوی کی حزم و احتیاط کے ساتھ حفاظت کرتے چلے آ رہے ہیں۔ حدیث کی حفاظت کا سب سے پہلے سہرا ان علمائے اصول حدیث کے سر ہے جنہوں نے حدیث کی حفاظت کے لیے بیسیوں علوم متعارف کروائے۔ زیر مطالعہ کتاب میں انہی علوم پر تفصیلی روشنی ڈالی گئی ہے۔   ایک استاذ حدیث ہونے کے ناطے مصنف موصوف کا احادیث رسول ﷺ کے ساتھ ایک خاص ربط و تعلق ہے اس لیے انہوں علوم الحدیث  سے متعلق تمام فنی و فکری مباحث کو قلمبندکرنے میں کسی قسم کی دقیقہ فروگزاشت سے کام نہیں لیا۔ اردو میں  اس موضوع پر اس سے پہلے بھی بہت کام ہو چکا ہے لیکن یہ کتاب اس حوالے سے انفرادی حیثیت کی حامل ہے کہ اس میں علوم الحدیث کے ہر موضوع کا مکمل احاطہ کیا گیا ہے۔ ڈاکٹر موصوف نے حدیث کی ضرورت و حجیت، اسماء الرجال، جرح و تعدیل، فن تخریج، شروح الحدیث، علم الانساب، علم معرفۃ الاسماء والکنی، لغات الحدیث الغرض حدیث کے کسی بھی موضوع کو تشنہ نہیں چھوڑا۔ مصنف کی جستجو اور لگن کا اندازہ اس سے لگائیے کہ انہوں نے اس کتاب کی تیاری کے لیے جن کتب سے استفادہ کیا ان کی تعداد سینکڑوں میں ہے جس کی فہرست انہوں نے کتاب کے آخر میں درج کی ہے۔ یقیناً یہ کتاب علوم حدیث کا انسائیکلو پیڈیا اور معلومات کا بحر ذخار ہے۔

 

عناوین

 

صفحہ نمبر

حرف اوّل: پروفیسر عبدالجبار شاکر

 

12

عرض مصنف

 

18

باب اوّل : تعارف حدیث

 

 

چند بنیادی اصطلاحات

 

21

سند

 

21

متن

 

23

حدیث

 

24

خبر

 

27

اثر

 

29

سنت

 

31

المسندِ (نون پر زیر سے)

 

36

المسنَد (نون پر زبر سے)

 

36

المحدّث

 

36

الحافظ

 

37

الحجہ

 

37

حدیث نبوی کی اہمیت،ضرورت و حجیت

 

38

حدیث وحی الہٰی ہے

 

39

حدیث کی تشریعی حیثیت

 

42

ہدایت اطاعت ِرسول سے مستلزم ہے

 

48

کتابت حدیث (ارشادات نبوی کی روشنی میں حکم کتابت اور منع کتابت ِ حدیث میں تطبیق)

 

56

حوالہ جات

 

56

باب دوم : سند حدیث

 

 

سند حدیث کی اہمیت

 

91

السند

 

92

المتن

 

93

محدثین کا اسناد کی طرف رجحان

 

94

سند حدیث کا آغاز و ارتقاء

 

106

مستشرقین اور سندِ حدیث

 

118

سند حدیث کا آغاز و ارتقاء

 

119

تحریک استشراق کا آغاز و ارتقاء

 

123

سند ِحدیث پر مستشرقین کے اعتراضات او ران کے جوابات

 

124

حوالہ جات

 

132

باب سوم : علوم الحدیث

 

 

محدث و طالب حدیث کے آداب

 

141

آداب

 

142

محدث اساتذہ کے ہاں جانے کے آداب

 

150

محدث کے آداب و فرائض

 

161

آداب روایت

 

166

مقام صحابہ ؓ اور کتب معرفۃ الصحابۃ

 

168

عدالت صحابہ

 

169

کتب معرفۃ الصحابہ

 

168

فن اسماء الرجال

 

188

فن اسماء الرجال

 

188

فن اسماء الرجال کا ارتقاء

 

196

کتب معرفۃ الصحابہ

 

199

کتب طبقات

 

203

کتب التاریخ

 

208

رجال کتب الصحاح الستہ

 

212

کتب الجرح و التعدیل

 

218

علم جرح و تعدیل کا تحقیقی جائزہ

 

226

علم جرح و تعدیل کی اہمیت

 

228

علم جرح و تعدیل کا ارتقاء

 

232

وجوہ طعن فی الراوی

 

238

مراتب جرح و تعدیل

 

239

کتب جرح و تعدیل

 

241

فن تخریج حدیث

 

244

تخریج حدیث کی اہمیت

 

247

تخریج حدیث کے فوائد

 

247

فن تخریج حدیث کا ارتقائی جائزہ

 

251

تخریج حدیث کے طریقے

 

254

علم الانساب

 

276

تعریف

 

276

علم الانساب پر اہم تصنیفات

 

286

علم معرفۃ الاسماء والکنیٰ

 

290

نام اور کنیت کی معرفت

 

290

الاسماء والکنیٰ پر اہم تصنیفات

 

291

معرفۃ الالقاب

 

301

القاب پر مشتمل کتب

 

302

علم الطبقات

 

303

کتب طبقات

 

307

نقد حدیث

 

312

نقد حدیث کی ضرورت و تاریخی پس منظر

 

312

نقد حدیث کی ماہیت

 

314

خارجی نقد حدیث

 

314

داخلی نقد حدیث

 

316

محدثین کا نقد حدیث کا اہتمام

 

326

منکرین حدیث کا   نقد حدیث کے بارے میں روّیہ

 

328

مستشرقین کا نقد حدیث کے بارے روّیہ

 

329

حوالہ جات

 

332

 

آن لائن مطالعہ وقتی طور پر موجود نہیں ہے - ان شاءالله بہت جلد بحال کر دیا جائے گا

ایڈ وانس سرچ

اعدادو شمار

  • آج کے قارئین 1798
  • اس ہفتے کے قارئین 13418
  • اس ماہ کے قارئین 82110
  • کل قارئین65112003

موضوعاتی فہرست